سفرلامکاں 

دشت تنہائی میں کہیں بھی سائے نہ نصیب ہوئے
شوق دیدار میں کلیم سوئے طوی غریب ہوئے


آتش نمرود کو کیا قوت عشق نے سرد
آتش عشق نے جلا ڈالا جو قریب ہوئے


لامتنائی ہے جب رفتار انوار و تجلیات
پھر نوری صدیوں کے فاصلے بھی عجیب ہوئے
 

منزل ٹھری لامکاں سفر عجیب مسافر حبیب
پلٹی مبدا کی طرف سواری براق خاطر منیب
 

مقام سدرہ سے بالا تھی جن کی پرواز
شب اسرارمحب ازلی کے مہماں وہ حبیب ہوئے


جام دیدار تھی جس رند کی جستجوئے آرزو
اس یار کے وہ ساقی طبیب ہوئے


کیا عجب تھا  حسن و عشق  کا یہ ملن
معشوق دلربا سے خلط جب منیب ہوئے

 


Poetry By Zahid Ikram

Back to Index Page